تجوید کی تعریف

تجوید کی تعریف :

 تجوید کے لغوی معنی سنوارنا اور خوبصورت بنانا ہے ، اور قراء کی اصطلاح میں جملہ قواعدِ مقررہ کے ساتھ قراٰن مجید کو پڑھنے کا نام تجوید ہے ۔

 

تجوید کا حکم :

  قراٰن مجید کو تجوید کے ساتھ پڑھنا ہر مسلمان (مرد اور عورت ) پر فرض ہے ۔جو کوئی قراٰن مجید کوبغیر تجوید کے پڑھیگا وہ گنہگار ہے  ۔

 

تجوید کا فائدہ :

  قراٰن مجید کی تلاوت کا ثواب اور اس کی فضیلت کے حاصل ہونے کا دار ومدار تجوید پر ہے ، جب کوئی شخص قراٰن مجید کو تجوید کے ساتھ پڑھتا ہے تو وہ تلاوت کی برکتوں کا مستحق ہوتا ہے اور اﷲ کے پاس اسکے لئے بلند درجات ہیں ۔

 

تجوید کے بنیادی اصول پانچ ہیں  :

۱۔ مخارج       ۲۔ صفات        ۳۔ وقف      ۴۔ وصل                  ۵۔ابتداء

 

حروف ہجاء

حروف ہجاء انتیس (۲۹) ہیں  :

ا  (الف)   ب  (باء)  ت(تاء)   ث(ثاء)  ج(جیم)

ح(حاء)     خ (خاء)   د (دال)    ذ(ذال)      ر (راء)

ز (زا)        س(سین)      ش (شین)    ص (صاد)    ض(ضاد)

ط(طاء)    ظ(ظاء)       ع(عین)      غ(غین)     ف (فاء)

 ق(قاف)               ک(کاف) ل(لام)   م(میم)      ن(نون)

و  (واو)     ہـ(ہاء)      ء(ہمزہ)    ي(یاء)

انتیس (۲۹) حروف ہجاء کے سترہ(۱۷) مخارج ، سترہ(۱۷) صفات اور پانچ(۵) مواضع ہیں ۔

 

موضع کی تعریف  :  مخرج بننے  کی جگہ کو موضع کہتے ہیں ، موضع کی جمع مواضع ہے ۔

 

مواضع حروف : مواضع پانچ ہیں (۱)جوفی (۲)حلقی (۳)لسانی (۴)شفوی (۵)خیشومی۔

۱۔ جوف (منہ کا خالی حصہ )          ۲۔حلق(سینہ سے منہ تک کا حصہ)   ۳۔ لسان(زبان)

              ۴۔ شفتین(دونوں ہونٹ)        ۵۔ خیشوم(ناک کا بانسہ)

 ٭٭٭